ترے سامنے تو سمجھ رہا تھا کہ پھول تھا

محمد اظہار الحق

ترے سامنے تو سمجھ رہا تھا کہ پھول تھا

محمد اظہار الحق

MORE BY محمد اظہار الحق

    ترے سامنے تو سمجھ رہا تھا کہ پھول تھا

    تجھے کیا خبر کہ یہ آئنا تھا کہ پھول تھا

    ترا پاؤں شام پہ آ گیا تھا کہ چاند تھا

    ترا ہجر صبح کو جل اٹھا تھا کہ پھول تھا

    ترا حسن سحر تھا ممکنات کی حد نہ تھی

    کف دست پر ترے خار اگا تھا کہ پھول تھا

    وہ کمال رخ تھا کرن تھی اس پہ کلی بھی تھی

    جو گلے ملا سر شب دیا تھا کہ پھول تھا

    یہ چمن بہشت کے تھے کہ ماں کا وجود تھا

    یہ دعا کا ہاتھ مہک اٹھا تھا کہ پھول تھا

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY