زندگی درد کی کہانی ہے

فراق گورکھپوری

زندگی درد کی کہانی ہے

فراق گورکھپوری

MORE BYفراق گورکھپوری

    زندگی درد کی کہانی ہے

    چشم انجم میں بھی تو پانی ہے

    بے نیازانہ سن لیا غم دل

    مہربانی ہے مہربانی ہے

    وہ بھلا میری بات کیا مانے

    اس نے اپنی بھی بات مانی ہے

    شعلۂ دل ہے یہ کہ شعلہ ساز

    یا ترا شعلۂ جوانی ہے

    وہ کبھی رنگ وہ کبھی خوشبو

    گاہ گل گاہ رات رانی ہے

    بن کے معصوم سب کو تاڑ گئی

    آنکھ اس کی بڑی سیانی ہے

    آپ بیتی کہو کہ جگ بیتی

    ہر کہانی مری کہانی ہے

    دونوں عالم ہیں جس کے زیر نگیں

    دل اسی غم کی راجدھانی ہے

    ہم تو خوش ہیں تری جفا پر بھی

    بے سبب تیری سرگرانی ہے

    سر بہ سر یہ فراز‌ مہر و قمر

    تیری اٹھتی ہوئی جوانی ہے

    آج بھی سن رہے ہیں قصۂ عشق

    گو کہانی بہت پرانی ہے

    ضبط کیجے تو دل ہے انگارا

    اور اگر روئیے تو پانی ہے

    ہے ٹھکانا یہ در ہی اس کا بھی

    دل بھی تیرا ہی آستانی ہے

    ان سے ایسے میں جو نہ ہو جائے

    نو جوانی ہے نو جوانی ہے

    دل مرا اور یہ غم دنیا

    کیا ترے غم کی پاسبانی ہے

    گردش چشم ساقیٔ دوراں

    دور افلاک کی بھی پانی ہے

    اے لب ناز کیا ہیں وہ اسرار

    خامشی جن کی ترجمانی ہے

    مے کدوں کے بھی ہوش اڑنے لگے

    کیا تری آنکھ کی جوانی ہے

    خودکشی پر ہے آج آمادہ

    ارے دنیا بڑی دوانی ہے

    کوئی اظہار ناخوشی بھی نہیں

    بد گمانی سی بد گمانی ہے

    مجھ سے کہتا تھا کل فرشتۂ عشق

    زندگی ہجر کی کہانی ہے

    بحر ہستی بھی جس میں کھو جائے

    بوند میں بھی وہ بیکرانی ہے

    مل گئے خاک میں ترے عشاق

    یہ بھی اک امر آسمانی ہے

    زندگی انتظار ہے تیرا

    ہم نے اک بات آج جانی ہے

    کیوں نہ ہو غم سے ہی قماش اس کا

    حسن تصویر شادمانی ہے

    سونی دنیا میں اب تو میں ہوں اور

    ماتم عشق آنجہانی ہے

    کچھ نہ پوچھو فراقؔ عہد شباب

    رات ہے نیند ہے کہانی ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    رتنکا تیواری

    رتنکا تیواری

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    زندگی درد کی کہانی ہے نعمان شوق

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY