Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

مصنف : کرشن بہاری نور

ایڈیٹر : مرزا شفیق حسین شفق

اشاعت : 001

ناشر : ادارۂ لوح و قلم، لکھنؤ

مقام اشاعت : لکھنؤ, انڈیا

سن اشاعت : 2004

زبان : Urdu

موضوعات : شاعری

ذیلی زمرہ جات : مجموعہ

صفحات : 108

معاون : شارب ردولوی

تجلیٔ نور
For any query/comment related to this ebook, please contact us at haidar.ali@rekhta.org

مصنف: تعارف

کرشن بہاری نور 8؍ نومبر 1925 کو لکھنؤ کے ایک علمی و ادبی گھرانے میں پیدا ہوئے۔ شاعرانہ ماحول میں تربیت ہوئی ۔ بچپن ہی سے شعر و شاعری کا شوق تھا۔ اچھے اور لائق دوستوں کی صحبت میں ان کے زوق کو اور جلا ملی۔ 
ان کی ادبی زندگی کا آغاز 1942 سے ہوا ، ابتدائ غزلوں پر موہن لال ماتھر بیدار تلسی رام ناز سے اصلاح لی اور بعد میں فضل نقوی کے حلقۂ تلامذہ میں داخل ہوئے۔ 42 سے 60 تک فضل نقوی سے اصلاح سخن لیتے رہے۔
نور صاحب محکمۂ پوسٹل اینڈ ٹیلی گراف میں ملازم تھے اور ایک ذمے دار عہدے سے ریٹائر ہوئے۔ نور کا پہلا شعری مجموعہ ’’دکھ سکھ‘‘ کے نام سے 1977 میں اترپردیش اردواکادمی کے مالی اشتراک سے شائع ہوا اور دوسرا "حسینیت کی چھانو میں" 1980 اور تیسرا "تپسیا" 1982 اور چوتھا "سمندر مری تلاش میں ہے" 1994 کو شائع ہوے۔ اترپردیش اردو اکادمی نے ان کی ادبی خدمات پر انعام دیا۔ ٣٠ مئ ٢٠٠٣ کو نور کا حرکت قلب بند ہو جانے کی وجہ سے غازی آباد میں انتقال ہوا اور وہیں آخری رسومات ادا کی گئیں۔ نور معاصر عہد میں کلاسیکی ادب کے ممتاز شاعر تھے۔ انہوں نے تلامزہ کی ایک کثیر تعداد چھوڑی ہے. ان میں بعض ایسے ہیں جو مشق کی وجہ سے خود مرتبہء استادی کو پہنچ چکے ہیں۔

.....مزید پڑھئے
For any query/comment related to this ebook, please contact us at haidar.ali@rekhta.org

مصنف کی مزید کتابیں

مصنف کی دیگر کتابیں یہاں پڑھئے۔

مزید

مقبول و معروف

مقبول و معروف اور مروج کتابیں یہاں تلاش کریں

مزید

Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

GET YOUR PASS
بولیے