آدمی بھی آدمی کا راز داں ہوتا نہیں

خالد حسن قادری

آدمی بھی آدمی کا راز داں ہوتا نہیں

خالد حسن قادری

MORE BY خالد حسن قادری

    آدمی بھی آدمی کا راز داں ہوتا نہیں

    بے خبر رہتا ہے لیکن بد گماں ہوتا نہیں

    زحمتیں یکساں مکان و لا مکاں سے کیا ہوا

    کیا خلاؤں سے پرے بھی آسماں ہوتا نہیں

    ہم کہ خود رہرو بھی ہیں رہبر بھی ہیں رہزن بھی ہیں

    واں پہنچتے ہیں جہاں پر کارواں ہوتا نہیں

    بڑھ گئے اخوان یوسف سے یہ اخوان الصفا

    پھینک دیتے ہیں وہاں جس جا کنواں ہوتا نہیں

    ہے جراحت آفریں درمان درد لا دوا

    شعلہ کرتا ہے شررباری دھواں ہوتا نہیں

    حسن بے پردا حریف تاب نظارہ نہیں

    ہو نظر کے سامنے لیکن عیاں ہوتا نہیں

    مرگ بے ہنگام اپنے شہر کا معمول ہے

    لوگ مر جاتے ہیں کوئی نوحہ خواں ہوتا نہیں

    جو بھی ہو جس حال میں ہے زندگی اس کو عزیز

    جان جاں کہنے سے کچھ جان جہاں ہوتا نہیں

    بے‌ اداکاری بھی خاموشی سے مر جاتے ہیں لوگ

    یاں پہ کوئی کھیل مرزا صاحباں ہوتا نہیں

    مآخذ:

    • کتاب : Sada-e-sher-e-fusu.n (Pg. 69)
    • Author : Khalid Hassan Qadrii
    • مطبع : Asif Javed (2001)
    • اشاعت : 2001

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY