آؤ تم ہی کرو مسیحائی

عبید اللہ علیم

آؤ تم ہی کرو مسیحائی

عبید اللہ علیم

MORE BY عبید اللہ علیم

    آؤ تم ہی کرو مسیحائی

    اب بہلتی نہیں ہے تنہائی

    تم گئے تھے تو ساتھ لے جاتے

    اب یہ کس کام کی ہے بینائی

    ہم کہ تھے لذت حیات میں گم

    جاں سے اک موج تشنگی آئی

    ہم سفر خوش نہ ہو محبت سے

    جانے ہم کس کے ہوں تمنائی

    کوئی دیوانہ کہتا جاتا تھا

    زندگی یہ نہیں مرے بھائی

    اول عشق میں خبر بھی نہ تھی

    عزتیں بخشتی ہے رسوائی

    کیسے پاؤ مجھے جو تم دیکھو

    سطح ساحل سے میری گہرائی

    جن میں ہم کھیل کر جوان ہوئے

    وہی گلیاں ہوئیں تماشائی

    مآخذ:

    • Book: Chand Chehra Sitara Aankhen (Pg. 127)

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites