بیگانۂ قیود بہار و خزاں رہے

جمیل الدین عالی

بیگانۂ قیود بہار و خزاں رہے

جمیل الدین عالی

MORE BYجمیل الدین عالی

    بیگانۂ قیود بہار و خزاں رہے

    یا رب مرا جنون محبت جواں رہے

    یہ بھی سمجھ سکی ہے نہ اب تک نگاہ شوق

    تم نے کہاں فریب دیا اور کہاں رہے

    دنیا میں چاک دل کو نہیں پوچھتا کوئی

    کیا جانے کتنے اہل جنوں بے نشاں رہے

    اس انجمن میں ہم بھی پہنچ تو گئے مگر

    جب تک رہے مزاج‌ نظر پر گراں رہے

    کیا کیا جفائیں کی ہیں ہر اک آرزو کے ساتھ

    اور اس طرح کہ ان پہ وفا کا گماں رہے

    اب یوں کرم نہ کر کہ بہ ایں وصف حسن و ناز

    شاید تجھے بھی عشق کا سودا گراں رہے

    لینے دے اپنا نام بھی مجھ کو کہ میرے بعد

    تو بھی مری غزل کے سبب جاوداں رہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY