دل تو پژمردہ ہے داغ گلستاں ہوں تو کیا

منیرؔ  شکوہ آبادی

دل تو پژمردہ ہے داغ گلستاں ہوں تو کیا

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    دل تو پژمردہ ہے داغ گلستاں ہوں تو کیا

    آنکھیں روتی ہیں دہان زخم خنداں ہوں تو کیا

    داغ غم دل پر اٹھا کر مرنے والے مر گئے

    برج قبروں کے اگر سرو چراغاں ہوں تو کیا

    بیگمیں شہزادیاں پھرنے لگیں خانہ خراب

    اب چڑیلیں صاحبان قصر و دیواں ہوں تو کیا

    فرش خاک اب اہل مسند کو نہیں ہوتا نصیب

    بوریا باف آج زیب تخت سلطاں ہوں تو کیا

    مسجدیں ٹوٹی پڑی ہیں صومعے ویران ہیں

    یاد حق میں ایک دو دلہائے سوزاں ہوں تو کیا

    صوفیان صاف طینت واصل حق ہو گئے

    خود نما دو چار ننگ اہل عرفاں ہوں تو کیا

    بجھ گئیں شمعیں جلیں پروانے تو کیا فائدہ

    اڑ گئے پروانے شمعیں نور افشاں ہوں تو کیا

    سخت جان و بے حیا دو چار ہم سے جو رہے

    ہر گھڑی پابند خوف عزت و جاں ہوں تو کیا

    کربلا میں یا نجف میں چل کے مر جائیں منیرؔ

    ہند میں ہم پہلوئے گور غریباں ہوں تو کیا

    مآخذ:

    • کتاب : intekhab-e-zarrin (Pg. 141)
    • Author : Khvaja Mohammad Zakariya
    • مطبع : Sangeet publication (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY