غزل کے پردے میں بے پردہ خواہشیں لکھنا

فضا ابن فیضی

غزل کے پردے میں بے پردہ خواہشیں لکھنا

فضا ابن فیضی

MORE BYفضا ابن فیضی

    غزل کے پردے میں بے پردہ خواہشیں لکھنا

    نہ آیا ہم کو برہنہ گزارشیں لکھنا

    ترے جہاں میں ہوں بے سایہ ابر کی صورت

    مرے نصیب میں بے ابر بارشیں لکھنا

    حساب درد تو یوں سب مری نگاہ میں ہے

    جو مجھ پہ ہو نہ سکیں وہ نوازشیں لکھنا

    خراشیں چہرے کی سینے کے زخم سوکھ چلے

    کہاں ہیں ناخن یاراں کی کاوشیں لکھنا

    ہم ایک چاک ہیں جو کوزہ گر کے ہاتھ میں ہے

    ہمارا کام زمانے کی گردشیں لکھنا

    بہ راہ راست کوئی فرض ادا نہیں ہوتا

    وہی سفارشیں سننا سفارشیں لکھنا

    ہوا نہ یہ بھی سلیقے سے زندگی کرتے

    ہر ایک سانس کو ناکام کوششیں لکھنا

    کہاں وہ لوگ جو تھے ہر طرف سے نستعلیق

    پرانی بات ہوئی چست بندشیں لکھنا

    ہنر ورو ذرا کچھ دن یہ طرفگی بھی سہی

    ہمارے لفظوں کو معنی کی لغزشیں لکھنا

    کبھی جو خط اسے لکھنا فضاؔ تو رکھنا یاد

    مری طرف سے بھی کچھ نیک خواہشیں لکھنا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY