اس بات کی نہیں ہے کوئی انتہا نہ پوچھ

جوشؔ ملیح آبادی

اس بات کی نہیں ہے کوئی انتہا نہ پوچھ

جوشؔ ملیح آبادی

MORE BYجوشؔ ملیح آبادی

    اس بات کی نہیں ہے کوئی انتہا نہ پوچھ

    اے مدعائے خلق مرا مدعا نہ پوچھ

    کیا کہہ کے پھول بنتی ہیں کلیاں گلاب کی

    یہ راز مجھ سے بلبل شیریں نوا نہ پوچھ

    جتنے گدا نواز تھے کب کے گزر چکے

    اب کیوں بچھائے بیٹھے ہیں ہم بوریا نہ پوچھ

    پیش نظر ہے پست و بلند رہ جنوں

    ہم بے خودوں سے قصۂ ارض و سما نہ پوچھ

    سنبل سے واسطہ نہ چمن سے مناسبت

    اس زلف مشکبار کا حال اے صبا نہ پوچھ

    صد محفل نشاط ہے اک شعر دلنشیں

    اس بربط سخن میں ہے کس کی صدا نہ پوچھ

    کر رحم میرے جیب و گریباں پہ ہم نفس

    چلتی ہے کوئے یار میں کیونکر ہوا نہ پوچھ

    رہتا نہیں ہے دہر میں جب کوئی آسرا

    اس وقت آدمی پہ گزرتی ہے کیا نہ پوچھ

    ہر سانس میں ہے چشمۂ حیوان و سلسبیل

    پھر بھی میں تشنہ کام ہوں یہ ماجرا نہ پوچھ

    بندہ ترے وجود کا منکر نہیں مگر

    دنیا نے کیا دیئے ہیں سبق اے خدا نہ پوچھ

    کیوں جوشؔ راز دوست کی کرتا ہے جستجو

    کہہ دو کوئی کہ شاہ کا حال اے گدا نہ پوچھ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY