جانے کس کی تھی خطا یاد نہیں

صوفی تبسم

جانے کس کی تھی خطا یاد نہیں

صوفی تبسم

MORE BYصوفی تبسم

    جانے کس کی تھی خطا یاد نہیں

    ہم ہوئے کیسے جدا یاد نہیں

    ایک شعلہ سا اٹھا تھا دل میں

    جانے کس کی تھی صدا یاد نہیں

    ایک نغمہ سا سنا تھا میں نے

    کون تھا شعلہ نوا یاد نہیں

    روز دہراتے تھے افسانۂ دل

    کس طرح بھول گیا یاد نہیں

    اک فقط یاد ہے جانا ان کا

    اور کچھ اس کے سوا یاد نہیں

    تو مری جان تمنا تھی کبھی

    اے مری جان وفا یاد نہیں

    ہم بھی تھے تیری طرح آوارہ

    کیا تجھے باد صبا یاد نہیں

    ہم بھی تھے تیری نواؤں میں شریک

    طائر نغمہ سرا یاد نہیں

    حال دل کیسے تبسمؔ ہو بیاں

    جانے کیا یاد ہے کیا یاد نہیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    فریدہ خانم

    فریدہ خانم

    مآخذ:

    • کتاب : sau-e-baar-e-chaman mahka (Pg. 133)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY