کوئی تو شکل محبت میں سازگار آئے

جمیل الدین عالی

کوئی تو شکل محبت میں سازگار آئے

جمیل الدین عالی

MORE BYجمیل الدین عالی

    کوئی تو شکل محبت میں سازگار آئے

    ہنسی نہیں ہے تو رونے سے ہی قرار آئے

    ہے ایک نعمت عظمیٰ غم محبت بھی

    مگر یہ شرط کہ انساں کو سازگار آئے

    جنون دشت پسندی بتائے دیتا ہے

    گزارنی تھی جو گھر میں وہ ہم گزار آئے

    گزارنی ہے مجھے عمر تیرے قدموں میں

    مجھے نہ کیوں ترے وعدوں پہ اعتبار آئے

    تمہاری بزم سے آ کر وہی خیال رہا

    ہم ایک بار گئے تم ہزار بار آئے

    نگاہ دوست کوئی اور بات ہے ورنہ

    تو بے قرار کرے اور مجھے قرار آئے

    ہے مطمئن بھی تو کس کس امید و بیم کے ساتھ

    وہ نا مراد جسے لطف انتظار آئے

    بتا گئی ہے جو مجھ کو وہ بے قرار نگاہ

    نہ کہہ سکوں گا اگر آج بھی قرار آئے

    یہ امتیاز ہے غالبؔ کے بعد عالیؔ کا

    کہ جس پہ آپ مرے ہیں اسے بھی مار آئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY