کوشش ہے گر اس کی کہ پریشان کرے گا

اسلم عمادی

کوشش ہے گر اس کی کہ پریشان کرے گا

اسلم عمادی

MORE BYاسلم عمادی

    کوشش ہے گر اس کی کہ پریشان کرے گا

    وہ دشمن جاں درد کو آسان کرے گا

    ہم اس کو جوابوں سے پشیمان کریں گے

    وہ ہم کو سوالوں سے پشیمان کرے گا

    پہلو تہی کرتے ہوئے دزدیدہ جو دیکھے

    چہرے کے تأثر سے وہ حیران کرے گا

    تو چھپ کے ہی آئے کہ برافگندہ نقاب آئے

    دل کی یہی عادت ہے کہ نقصان کرے گا

    قزاقوں کی بستی میں رہا کرتے ہیں ہم سب

    ہر گھر کو کوئی دوسرا ویران کرے گا

    ہر ٹیس سے ابھرے گی تری یاد کی خوشبو

    ہر زخم مرے شوق پہ احسان کرے گا

    اسلمؔ یہ سنا ہے کہ مرا شہر وفا بھی

    تخریب کو شرمندۂ ایقان کرے گا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY