کیوں ملامت کا ہدف گردش پیمانہ بنے

علقمہ شبلی

کیوں ملامت کا ہدف گردش پیمانہ بنے

علقمہ شبلی

MORE BYعلقمہ شبلی

    INTERESTING FACT

    (نذر آرزو لکھنوی)

    کیوں ملامت کا ہدف گردش پیمانہ بنے

    لغزش پا سے مری کعبہ و بت خانہ بنے

    عقل کے بس کی نہیں بخیہ‌ گری پھولوں کی

    درد جس کو ہو گلستاں کا وہ دیوانہ بنے

    لب حکمت سے شب و روز اجالے ٹپکے

    تیرہ ذہنی کا مگر یہ بھی مداوا نہ بنے

    بے سبب شوق نہیں مائل افسانہ گری

    ہر حقیقت کی یہ خواہش ہے کہ افسانہ بنے

    رخ جاناں کے تصور ہی میں راتیں گزریں

    چاند تارے دل مہجور کی دنیا نہ بنے

    آشنا فصل بہاراں ہی نہیں ہے شاید

    کیا کہیں پھول کہ کیوں سبزۂ بیگانہ بنے

    میں تو ہوں شمع صفت سوز سراپا شبلیؔ

    جس کو جلنا نہیں آتا ہو وہ پروانہ بنے

    مآخذ:

    • کتاب : Be-Chehrah Lamhe (Pg. 69)
    • Author : Alqama Shibli
    • مطبع : Shaharyaar Brothers Publications (1975)
    • اشاعت : 1975

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY