نیند آ جائے تو لمحات میں مر جاتے ہیں

فیض راحیل خان

نیند آ جائے تو لمحات میں مر جاتے ہیں

فیض راحیل خان

MORE BYفیض راحیل خان

    نیند آ جائے تو لمحات میں مر جاتے ہیں

    دن سے بچ نکلے بدن رات میں مر جاتے ہیں

    کرتے ہیں اپنی زباں سے جو دلوں کو زخمی

    دب کے اک دن وہ اسی بات میں مر جاتے ہیں

    یاد آتی ہے تیری جب بھی گلابی باتیں

    ڈوب کر تیرے خیالات میں مر جاتا ہوں

    جب کبھی جاتے ہیں احباب کی شادی میں ہم

    جانیں کیوں جاتے ہی صدمات میں مر جاتے ہیں

    لڑنے کی تاب تو مٹی کے مکانوں میں ہے

    کانچ گھر موسم برسات میں مر جاتے ہیں

    تب کوئی ڈوب کے پانی میں فنا ہوتا ہے

    خواب جب تلخئ حالات میں مر جاتے ہیں

    جب ہوا باغ سے کہتی ہے خزاں آئی ہے

    باغباں پھول لیے ہات میں مر جاتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY