پھیلا عجب غبار ہے آئینہ گاہ میں

اعجاز گل

پھیلا عجب غبار ہے آئینہ گاہ میں

اعجاز گل

MORE BYاعجاز گل

    پھیلا عجب غبار ہے آئینہ گاہ میں

    مشکل ہے خود کو ڈھونڈھنا عکس تباہ میں

    جل بجھ چکا ہے خواہش ناکام سے وجود

    پرچھائیں پھر رہی ہے مکان سیاہ میں

    میں وہ اجل نصیب کہ قاتل ہوں اپنا آپ

    ہوتا ہوں روز قتل کسی قتل گاہ میں

    رکھا گیا ہوں عزت و توقیر کا اسیر

    باندھا گیا ہے سر کو غرور کلاہ میں

    ہلکان میں نہیں تری خاطر سر ہجوم

    سب مر رہے ہیں حسرت یک دو نگاہ میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY