پھر مجھے کون و مکاں دشت و بیاباں سے لگے

احسان اکبر

پھر مجھے کون و مکاں دشت و بیاباں سے لگے

احسان اکبر

MORE BY احسان اکبر

    پھر مجھے کون و مکاں دشت و بیاباں سے لگے

    روبرو کون تھا جو آئینے حیراں سے لگے

    کچھ تھی کم حوصلگی اپنی تھی کچھ بے صبری

    کچھ مجھے عشق کے ہنگامے بھی آساں سے لگے

    وقت کٹتا رہا تھا عہد حضوری کی فراق

    زخم لگتے رہے چاہے کسی عنواں سے لگے

    زیست ہم ہار کے بھی ہاتھ ملائیں تجھ سے

    اپنے یہ حوصلے شاید تجھے ارزاں سے لگے

    زندگی میرے اضافے مجھے واپس کر دے

    جھاڑ دے خار جو ناحق ترے داماں سے لگے

    مآخذ:

    • Book: Dariche (Pg. 28)
    • Author: Bashir Saifi
    • مطبع: Shakhsar Publishers (1975)
    • اشاعت: 1975

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites