رات بھر چاند کی گلیوں میں پھراتی ہے مجھے

کفیل آزر امروہوی

رات بھر چاند کی گلیوں میں پھراتی ہے مجھے

کفیل آزر امروہوی

MORE BYکفیل آزر امروہوی

    رات بھر چاند کی گلیوں میں پھراتی ہے مجھے

    زندگی کتنے حسیں خواب دکھاتی ہے مجھے

    ان دنوں عشق کی فرصت ہی نہیں ہے ورنہ

    اس دریچے کی اداسی تو بلاتی ہے مجھے

    توڑ دیتا ہوں کہ یہ بھی کہیں دھوکا ہی نہ ہو

    جام میں جب تری صورت نظر آتی ہے مجھے

    دن اسی فرق کے جنگل میں گزر جاتا ہے

    رات یادوں کا وہی زہر پلاتی ہے مجھے

    ساتھ جس روز سے چھوٹا ہے کسی کا آذرؔ

    جیسے کمرے کی ہر اک چیز ڈراتی ہے مجھے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY