سہمی ہے شام جاگی ہوئی رات ان دنوں

قمر عباس قمر

سہمی ہے شام جاگی ہوئی رات ان دنوں

قمر عباس قمر

MORE BYقمر عباس قمر

    سہمی ہے شام جاگی ہوئی رات ان دنوں

    کتنے خراب ہو گئے حالات ان دنوں

    یعنی کہ میں خدا سے بہت دور ہو گیا

    اٹھتے نہیں دعا کو مرے ہاتھ ان دنوں

    روٹھی ہوئی ہے چاند سے اک چاندنی دلہن

    بے نور ہے یہ تاروں کی بارات ان دنوں

    نا آشنائے سوزش غم ہے تمام شہر

    سمجھے نہ تم بھی حدت جذبات ان دنوں

    اترا ہے میری آنکھ میں بادل کا اک ہجوم

    ہر صبح و شام ہوتی ہے برسات ان دنوں

    مدت ہوئی کہ چھوٹ گیا خود سے اپنا نفس

    تم سے بھی ہو سکی نہ ملاقات ان دنوں

    یہ شعر و شاعری کا ہی فیضان ہے قمرؔ

    دشمن بھی کر رہا ہے تری بات ان دنوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY