سمجھتا ہوں کہ تو مجھ سے جدا ہے

فراق گورکھپوری

سمجھتا ہوں کہ تو مجھ سے جدا ہے

فراق گورکھپوری

MORE BY فراق گورکھپوری

    سمجھتا ہوں کہ تو مجھ سے جدا ہے

    شب فرقت مجھے کیا ہو گیا ہے

    ترا غم کیا ہے بس یہ جانتا ہوں

    کہ میری زندگی مجھ سے خفا ہے

    کبھی خوش کر گئی مجھ کو تری یاد

    کبھی آنکھوں میں آنسو آ گیا ہے

    حجابوں کو سمجھ بیٹھا میں جلوہ

    نگاہوں کو بڑا دھوکا ہوا ہے

    بہت دور اب ہے دل سے یاد تیری

    محبت کا زمانہ آ رہا ہے

    نہ جی خوش کر سکا تیرا کرم بھی

    محبت کو بڑا دھوکا رہا ہے

    کبھی تڑپا گیا ہے دل ترا غم

    کبھی دل کو سہارا دے گیا ہے

    شکایت تیری دل سے کرتے کرتے

    اچانک پیار تجھ پر آ گیا ہے

    جسے چونکا کے تو نے پھیر لی آنکھ

    وہ تیرا درد اب تک جاگتا ہے

    جہاں ہے موجزن رنگینئ حسن

    وہیں دل کا کنول لہرا رہا ہے

    گلابی ہوتی جاتی ہیں فضائیں

    کوئی اس رنگ سے شرما رہا ہے

    محبت تجھ سے تھی قبل از محبت

    کچھ ایسا یاد مجھ کو آ رہا ہے

    جدا آغاز سے انجام سے دور

    محبت اک مسلسل ماجرا ہے

    خدا حافظ مگر اب زندگی میں

    فقط اپنا سہارا رہ گیا ہے

    محبت میں فراقؔ اتنا نہ غم کر

    زمانے میں یہی ہوتا رہا ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    سمجھتا ہوں کہ تو مجھ سے جدا ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY