تمناؤں کو زندہ آرزوؤں کو جواں کر لوں

اختر شیرانی

تمناؤں کو زندہ آرزوؤں کو جواں کر لوں

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    تمناؤں کو زندہ آرزوؤں کو جواں کر لوں

    یہ شرمیلی نظر کہہ دے تو کچھ گستاخیاں کر لوں

    بہار آئی ہے بلبل درد دل کہتی ہے پھولوں سے

    کہو تو میں بھی اپنا درد دل تم سے بیاں کر لوں

    ہزاروں شوخ ارماں لے رہے ہیں چٹکیاں دل میں

    حیا ان کی اجازت دے تو کچھ بیباکیاں کر لوں

    کوئی صورت تو ہو دنیائے فانی میں بہلنے کی

    ٹھہر جا اے جوانی ماتم عمر رواں کر لوں

    چمن میں ہیں بہم پروانہ و شمع و گل و بلبل

    اجازت ہو تو میں بھی حال دل اپنا بیاں کر لوں

    کسے معلوم کب کس وقت کس پر گر پڑے بجلی

    ابھی سے میں چمن میں چل کر آباد آشیاں کر لوں

    بر آئیں حسرتیں کیا کیا اگر موت اتنی فرصت دے

    کہ اک بار اور زندہ شیوۂ عشق جواں کر لوں

    مجھے دونوں جہاں میں ایک وہ مل جائیں گر اخترؔ

    تو اپنی حسرتوں کو بے نیاز دو جہاں کر لوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY