تم مل گئے تو کوئی گلہ اب نہیں رہا

مدحت الاختر

تم مل گئے تو کوئی گلہ اب نہیں رہا

مدحت الاختر

MORE BYمدحت الاختر

    تم مل گئے تو کوئی گلہ اب نہیں رہا

    میں اپنی زندگی سے خفا اب نہیں رہا

    پہلے مری نگاہ میں دنیا حقیر تھی

    میں اپنے ساتھیوں سے جدا اب نہیں رہا

    اب بھی اسی درخت کے نیچے ملیں گے ہم

    سایہ اگرچہ اس کا گھنا اب نہیں رہا

    تیرے قدم نے جان کہانی میں ڈال دی

    قصہ ہمارا بے سر و پا اب نہیں رہا

    اب میری اپنے آخری دشمن سے جنگ ہے

    میداں میں کوئی میرے سوا اب نہیں رہا

    ہم کو اسی دیار کی مٹی ہوئی عزیز

    نقشے میں جس کا نام پتہ اب نہیں رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے