تو اک قدم بھی جو میری طرف بڑھا دیتا

کیفی وجدانی

تو اک قدم بھی جو میری طرف بڑھا دیتا

کیفی وجدانی

MORE BY کیفی وجدانی

    تو اک قدم بھی جو میری طرف بڑھا دیتا

    میں منزلیں تری دہلیز سے ملا دیتا

    خبر تو دیتا مجھے مجھ کو چھوڑ جانے کی

    میں واپسی کا تجھے راستہ بتا دیتا

    مجھے تو رہنا تھا آخر حد تعین میں

    وہ پاس آتا تو میں فاصلہ بڑھا دیتا

    ہم ایک تھے تو ہمیں بے صدا ہی رہنا تھا

    پکارتا وہ کسے میں کسے صدا دیتا

    وہ خواب دیکھ رہی تھیں یہ جاگتی آنکھیں

    چراغ خود نہیں بجھتا تو میں بجھا دیتا

    ہوا کے رخ پہ مرا گاؤں ہی نہ تھا ورنہ

    جو مٹھیوں میں بھری تھی وہ خاک اڑا دیتا

    مآخذ:

    • کتاب : ras-Rang(Mehfil-e-Adab) (Pg. 9)
    • اشاعت : 2001

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY