زندہ آنکھوں میں بے حسی روشن

صباحت عروج

زندہ آنکھوں میں بے حسی روشن

صباحت عروج

MORE BYصباحت عروج

    زندہ آنکھوں میں بے حسی روشن

    مردہ چہروں پہ تازگی روشن

    ان نصیبوں پہ روز ہو ماتم

    ان کی محفل میں روشنی روشن

    خود میں اس کو بجھا دیا میں نے

    پھر ہوا مجھ میں اور بھی روشن

    بے وفا تھا مگر بچھڑنے پر

    اس کی آنکھوں میں تھی نمی روشن

    عادتاً سب سے بات کرتی ہوں

    اس کی رہتی مگر کمی روشن

    اس کے چہرے سے چھن کے آتی ہے

    تب ہی لگتی ہے چاندنی روشن

    یوں ہی روشن رہیں وہ سب چہرے

    جن کے دم سے ہے زندگی روشن

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY