تاج محل

پروین شاکر

تاج محل

پروین شاکر

MORE BYپروین شاکر

    سنگ مرمر کی خنک بانہوں میں

    حسن خوابیدہ کے آگے مری آنکھیں شل ہیں

    گنگ صدیوں کے تناظر میں کوئی بولتا ہے

    وقت جذبے کے ترازو پہ زر و سیم و جواہر کی تڑپ تولتا ہے!

    ہر نئے چاند پہ پتھر وہی سچ کہتے ہیں

    اسی لمحے سے دمک اٹھتے میں ان کے چہرے

    جس کی لو عمر گئے اک دل شب زاد کو مہتاب بنا آئی تھی!

    اسی مہتاب کی اک نرم کرن

    سانچۂ سنگ میں ڈھل پائی تو

    عشق رنگ ابدیت سے سرافراز ہوا

    کیا عجب نیند ہے

    جس کو چھو کر

    جو بھی آتا ہے کھلی آنکھ لیے آتا ہے

    سو چکے خواب ابد دیکھنے والے کب کے

    اور زمانہ ہے کہ اس خواب کی تعبیر لیے جاگ رہا ہے اب تک!

    مأخذ :
    • کتاب : kulliyaat-e-maahe tamaam(sadbarg) (Pg. 159)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY