توسیع شہر

مجید امجد

توسیع شہر

مجید امجد

MORE BY مجید امجد

    بیس برس سے کھڑے تھے جو اس گاتی نہر کے دوار

    جھومتے کھیتوں کی سرحد پر بانکے پہرے دار

    گھنے سہانے چھاؤں چھڑکتے بور لدے چھتنار

    بیس ہزار میں بک گئے سارے ہرے بھرے اشجار

    جن کی سانس کا ہر جھونکا تھا ایک عجیب طلسم

    قاتل تیشے چیر گئے ان ساونتوں کے جسم

    گری دھڑام سے گھائل پیڑوں کی نیلی دیوار

    کٹتے ہیکل جھڑتے پنجر چھٹتے برگ و بار

    سہی دھوپ کے زرد کفن میں لاشوں کے انبار

    آج کھڑا میں سوچتا ہوں اس گاتی نہر کے دوار

    اس مقتل میں صرف اک میری سوچ لہکتی ڈال

    مجھ پر بھی اب کاری ضرب اک اے آدم کی آل

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    توسیع شہر نعمان شوق

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyaat-e-majiid Amjad (Pg. 352)
    • Author : Majiid Amjad
    • اشاعت : 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY