Ain Tabish's Photo'

عین تابش

1958 | پٹنہ, ہندوستان

اہم معاصر شاعر، اپنی نظموں کے لیے معروف

اہم معاصر شاعر، اپنی نظموں کے لیے معروف

غزل

آوارہ بھٹکتا رہا پیغام کسی کا

عین تابش

حیات_سوختہ_ساماں اک استعارۂ_شام

عین تابش

وہی جنوں کی سوختہ_جانی وہی فسوں افسانوں کا

عین تابش

یہاں کے رنگ بڑے دل_پذیر ہوئے ہیں

عین تابش

خاکساری تھی کہ بن دیکھے ہی ہم خاک ہوئے

عین تابش

غبار_جہاں میں چھپے باکمالوں کی صف دیکھتا ہوں

عین تابش

گھنی سیہ زلف بدلیوں سی بلا سبب مجھ میں جاگتی ہے

عین تابش

میری تنہائی کے اعجاز میں شامل ہے وہی

عین تابش

نظم

آنسوؤں کے رتجگوں سے

عین تابش

اک شہر تھا اک باغ تھا

عین تابش

بدلنے کا کوئی موسم نہیں ہوتا

عین تابش

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI