غزل 4

 

اشعار 3

ہر ایک موڑ سے پوچھا ہے منزلوں کا پتہ

سفر تمام ہوا رہبر نہیں آئے

کتنے ہی دائروں میں بٹا مرکز خیال

اک بت کے ہم نے سیکڑوں پیکر بنا دیئے

چمک اٹھے ہیں تھپیڑوں کی چوٹ سے قطرے

صدف کی گود میں انجمؔ گہر نہیں آئے

 

"سیتا پور" کے مزید شعرا

  • جگرؔ بسوانی جگرؔ بسوانی
  • کیف احمد صدیقی کیف احمد صدیقی
  • صفدر آہ سیتاپوری صفدر آہ سیتاپوری