noImage

بیاں احسن اللہ خان

1727 - 1798 | دلی, ہندوستان

ممتاز کلاسیکی شاعر، میرتقی میر کے ہم عصر

ممتاز کلاسیکی شاعر، میرتقی میر کے ہم عصر

عرش تک جاتی تھی اب لب تک بھی آ سکتی نہیں

رحم آ جاتا ہے کیوں اب مجھ کو اپنی آہ پر

it cannot even reach my lips, it used to reach the highest skies

I feel compassion at the sorry condition of my sighs

لہو ٹپکا کسی کی آرزو سے

ہماری آرزو ٹپکی لہو سے

سیرت کے ہم غلام ہیں صورت ہوئی تو کیا

سرخ و سفید مٹی کی مورت ہوئی تو کیا

کوئی سمجھائیو یارو مرا محبوب جاتا ہے

مرا مقصود جاتا ہے مرا مطلوب جاتا ہے

دلبروں کے شہر میں بیگانگی اندھیر ہے

آشنائی ڈھونڈتا پھرتا ہوں میں لے کر دیا

ہم سرگزشت کیا کہیں اپنی کہ مثل خار

پامال ہو گئے ترے دامن سے چھوٹ کر