حنیف اخگر کا تعارف

اصلی نام : سید محمد حنیف

پیدائش : 03 Sep 1928 | ملیح آباد, اتر پردیش

وفات : 31 May 2009

حنیف اخگر 3 ستمبر 1928ء کو قصبہ ملیح آباد ‘ضلع لکھنؤ کے ایک دین دار گھرانے میں پیدا ہوئے اور تقسیم ہند کے بعد پاکستان ہجرت کی۔ ابتدائی اردو‘ فارسی اور عربی کی مروّجہ تعلیم اور ذہنی و فکری تربیت حنیف اخگر صاحب نے اپنے گھر اور قصبہ ملیح آباد کے مدرسوں سے حاصل کی۔ منشی فاضل کی تعلیم سلیمانیہ کالج بھوپال میں ہوئی‘ پھر 1948 میں امیرالدولہ اسلامیہ کالج سے ہائی اسکول کا امتحان فرسٹ ڈویژن اور امتیازی نمبروں سے پاس کیا۔ 

شعری ذوق اور شاعری کے حوالے سے حنیف اخگر خوش قسمت رہے کہ خالص علمی اور ادبی ماحول اور گھرانے میں پرورش پائی ‘ آپ کے والد شریف اثر صاحب اپنے دور کے مقبول اور خوش فکر شاعر تھے‘ اس طرح آپ نے فکری ‘ شعری ‘ لفظی اور خوش الحانی کی تمام تر توانائیوں کے ساتھ ایک بھر پور شعری سفر کا آغاز کیا ‘ اور دیکھتے ہی دیکھتے شہرت اور مقبولیت کی منزلیں طے کرتے چلے گئے۔

انہوں نے پیشہ ورانہ زندگی کا آغاز کراچی میں بینک کی ملازمت سے کیا، جب کہ اس دوران انہوں نے کراچی یونیورسٹی سے ایم بی اے کیا۔ بعدازاں وہ سعودی عرب چلے گئے، اس کے بعد امریکہ چلے گئے اوراقوامِ مُتّحدہ کی انٹرنیشنل سول سروس میں تقریباً سترہ برس مختلف جگہوں پر خدمات انجام دیں۔ اور آخر میں یو این کیپیٹل ڈیویلپمنٹ فنڈ کے ڈویژن چیف برائے ایشیا پیسیفک لائن، امریکہ اور عرب اسٹیٹس ڈویژن کی حیثیت سے 2 مئی 1989ء کو ریٹائر ہوئے ، اور وقتاً فوقتاً ایکسپرٹ یا کنسلٹنٹ کی حیثیت سے خدمات انجام دیتے رہے۔ اس کے علاوہ، ورلڈ اسمبلی آف سمال اینڈ میڈیم انٹرپرائزز کے مستقل نمائندہ برائے اقوامِ متّحدہ، نیویارک بھی رہے۔ 
انہوں نے ادبی ادارہ حلقہٴ فن و ادب شمالی امریکہ کی بنیاد ڈالی اور یہاں اُردو زبان و ادب کو فروغ دیا۔

ان کے تین مجموعوں میں "چراغاں"1989ء، "خیاباں"1997ء اور نعتیہ شاعری "خلق مجسم" 2003 شامل ہیں اور اس کے ساتھ ہی انہوں نے اپنی سوانح حیات "اعتراف و انکشاف" بھی لکھی ہے۔ انہیں عالمی اُردو کانفرنس نئی دہلی کی جانب سے عالمی اُردو ایوارڈ اور ” خواجہ میر درد ایوارڈ “ سے بھی نوازا گیا تھا۔ انہوں نے ایک کتاب ” اسٹاک مارکیٹ ان پاکستان “ بھی لکھی ہے۔ ان کی وفات 31 مئی 2009ء، ڈلاس، ٹیکساس میں ہوئ-

موضوعات