noImage

جامی ردولوی

1924 | لندن, برطانیہ

زہر زندگانی کا پی کے عقل آئی ہے

داروئے غم ہستی تلخئ سبو میں ہے

بھیڑ میں زمانے کی ہم سدا اکیلے تھے

وہ بھی دور ہے کتنا جو رگ گلو میں ہے