aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

خاور جیلانی

غزل 13

اشعار 14

سبھی کردار تھک کر سو گئے ہیں

مگر اب تک کہانی چل رہی ہے

جینا تو الگ بات ہے مرنا بھی یہاں پر

ہر شخص کی اپنی ہی ضرورت کے لیے ہے

وقت گزر جاتا ہے لیکن دل کی رنجش

دل میں بیٹھی کی بیٹھی ہی رہ جاتی ہے

سچائی وہ جنگ ہے جس میں بعض اوقات سپاہی کو

آپ مقابل اپنے ہی ڈٹ جانا پڑتا ہے

وہ کچھ سے کچھ بنا ڈالے گا تسلیمات کے معنی

سلیقہ آ گیا اس کو اگر انکار کرنے کا

آڈیو 5

روح کے دامن سے اپنی دنیا_داری باندھ کر

عطا کے زور_اثر سے بھی ٹوٹ سکتی تھی

قدم قدم کا علاقہ ہے ناروا تک ہے

Recitation

"فیصل آباد" کے مزید شعرا

Recitation

Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

GET YOUR PASS
بولیے