Mahirul Qadri's Photo'

ماہر القادری

1906 - 1978 | کراچی, پاکستان

غزل

ابھی دشت_کربلا میں ہے بلند یہ ترانہ

نعمان شوق

اگر فطرت کا ہر انداز بیباکانہ ہو جائے

نعمان شوق

اے نگاہ_دوست یہ کیا ہو گیا کیا کر دیا

نعمان شوق

فرصت_آگہی بھی دی لذت_بے_خودی بھی دی

نعمان شوق

وہ ہنس ہنس کے وعدے کیے جا رہے ہیں

نعمان شوق

کچھ اس طرح نگاہ سے اظہار کر گئے

نعمان شوق

کس قیامت کی گھٹا چھائی ہے

نعمان شوق

کسی کی بے_رخی کا غم نہیں ہے

نعمان شوق

ہر نفس میں دل کی بیتابی بڑھاتے جائیے

نعمان شوق

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI