Mahirul Qadri's Photo'

ماہر القادری

1906 - 1978 | کراچی, پاکستان

غزل 17

نظم 1

 

اشعار 10

یہ کہہ کے دل نے مرے حوصلے بڑھائے ہیں

غموں کی دھوپ کے آگے خوشی کے سائے ہیں

  • شیئر کیجیے

عقل کہتی ہے دوبارہ آزمانا جہل ہے

دل یہ کہتا ہے فریب دوست کھاتے جائیے

اک بار تجھے عقل نے چاہا تھا بھلانا

سو بار جنوں نے تری تصویر دکھا دی

  • شیئر کیجیے

کتاب 202

در یتیم

 

1971

در یتیم

 

2010

فردوس

 

1955

جذبات ماھر

 

 

کاروان حجاز

 

 

کردار

 

1944

کلیات ماہر

 

1994

ماہر القادری کے سو شعر

 

 

محسوسات ماہر

 

1943

نغمات ماہر

 

1944

تصویری شاعری 2

ذرا دریا کی تہہ تک تو پہنچ جانے کی ہمت کر تو پھر اے ڈوبنے والے کنارا ہی کنارا ہے

یہ کہہ کے دل نے مرے حوصلے بڑھائے ہیں غموں کی دھوپ کے آگے خوشی کے سائے ہیں

 

ویڈیو 3

This video is playing from YouTube

آڈیو 9

ابھی دشت_کربلا میں ہے بلند یہ ترانہ

اگر فطرت کا ہر انداز بیباکانہ ہو جائے

اے نگاہ_دوست یہ کیا ہو گیا کیا کر دیا

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

متعلقہ شعرا

  • اختر شیرانی اختر شیرانی ہم عصر
  • احسان دانش احسان دانش ہم عصر
  • عبد الحمید عدم عبد الحمید عدم ہم عصر

"کراچی" کے مزید شعرا

  • کوثر نیازی کوثر نیازی
  • عشرت رومانی عشرت رومانی
  • صابر وسیم صابر وسیم
  • سراج منیر سراج منیر
  • صبا اکبرآبادی صبا اکبرآبادی
  • عشرت رحمانی عشرت رحمانی
  • تابش دہلوی تابش دہلوی
  • سراج الدین ظفر سراج الدین ظفر
  • بہزاد لکھنوی بہزاد لکھنوی
  • اقبال عظیم اقبال عظیم