noImage

مسرور جالندھری

1929

مسرور جالندھری کے اشعار

جو بھی چاہو نکال لو مطلب

خامشی گفتگو پہ بھاری ہے

کیوں ہم کو سناتے ہو جہنم کے فسانے

اس دور میں جینے کی سزا کم تو نہیں ہے

اک عمر کی محنت کا یہ پھل پائیں گے ہم لوگ

مٹی کی ردا اوڑھ کے سو جائیں گے ہم لوگ

ہماری آنکھوں میں بے وجہ آ گئے آنسو

یقین کیجے کسی بات پر نہیں آئے

شاید آ جائے کسی وقت لب بام وہ چاند

شام سے صبح تلک بند دریچہ نہ کیا

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

GET YOUR FREE PASS
بولیے