Meer Khaleeq's Photo'

میر خلیق

1766 - 1844 | لکھنؤ, انڈیا

میر خلیق کے اشعار

مثل آئینہ ہے اس رشک قمر کا پہلو

صاف ادھر سے نظر آتا ہے ادھر کا پہلو

سر جھکا لیتا ہے لالہ شرم سے

جب جگر کے داغ دکھلاتے ہیں ہم

نزع میں گر مری بالیں پہ تو آیا ہوتا

اس طرح اشک میں آنکھوں میں نہ لایا ہوتا

غفلت میں فرق اپنی تجھ بن کبھو نہ آیا

ہم آپ کے نہ آئے جب تک کہ تو نہ آیا

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

بولیے