غزل

تھکن کا بوجھ بدن سے اتارتے ہیں ہم

نعمان شوق

دشت کی پیاس کسی طور بجھائی جاتی

نعمان شوق

زخم اس زخم پہ تحریر کیا جائے_گا

نعمان شوق

ساتھ رونے نہ سہی گیت سنانے آتے

نعمان شوق

صرف بچے ہی نہیں شور مچانے آتے (ردیف .. ن)

نعمان شوق

عشق تھا اور عقیدت سے ملا کرتے تھے

نعمان شوق

مجھ میں خوشبو بسی اسی کی ہے

نعمان شوق

نیند آتی ہے مگر خواب نہیں آتے ہیں

نعمان شوق

کچھ اپنی فکر نہ اپنا خیال کرتا ہوں

نعمان شوق

ہمارا خواب اگر خواب کی خبر رکھے

نعمان شوق

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI