راشد آذر کی اشعار

دیکھنے والے یوں تو بہت دیکھے ہیں لیکن

مر جاؤں جو کوئی تیری ادا سے دیکھے

جن ہاتھوں سے بٹتی خیراتیں دیکھی تھیں

ان آنکھوں سے ان ہاتھوں میں کاسے دیکھے