638
Favorite

باعتبار

رونق بزم نہیں تھا کوئی تجھ سے پہلے

رونق بزم ترے بعد نہیں ہے کوئی

اسی کے خواب تھے سارے اسی کو سونپ دیئے

سو وہ بھی جیت گیا اور میں بھی ہارا نہیں

دل جو ٹوٹا ہے تو پھر یاد نہیں ہے کوئی

اس خرابے میں اب آباد نہیں ہے کوئی

اس سے کہہ دو کہ مجھے اس سے نہیں ملنا ہے

وہ ہے مصروف تو بے کار نہیں ہوں میں بھی

اسی سے پوچھو اسے نیند کیوں نہیں آتی

یہ اس کا کام نہیں ہے تو میرا کام ہے کیا

ہم کسی اور وقت کے ہیں اسیر

صبح کے شام کے رہے ہی نہیں

ملتے ہو تو اب تم بھی بہت رہتے ہو خاموش

کیا تم کو بھی اب میری خبر ہونے لگی ہے

دیر تک جاگتے رہنے کا سبب یاد آیا

تم سے بچھڑے تھے کسی موڑ پہ اب یاد آیا

نہ چاند کا نہ ستاروں نہ آفتاب کا ہے

سوال اب کے مری جاں ترے جواب کا ہے

موسم کوئی بھی ہو پہ بدلتا نہیں ہوں میں

یعنی کسی بھی سانچے میں ڈھلتا نہیں ہوں میں

اب مجھ میں کوئی بات نئی ڈھونڈھنے والو

اب مجھ میں کوئی بات پرانی بھی نہیں ہے

تم تھے تو ہر اک درد تمہیں سے تھا عبارت

اب زندگی خانوں میں بسر ہونے لگی ہے

نہ رات باقی ہے کوئی نہ خواب باقی ہے

مگر ابھی مرے غم کا حساب کا باقی ہے

پیروں سے باندھ لیتا ہوں پچھلی مسافتیں

تنہا کسی سفر پہ نکلتا نہیں ہوں میں

آنکھوں نے بنائی تھی کوئی خواب کی تصویر

تم بھول گئے ہو تو کسے دھیان رہے گا

لمبی ہے بہت آج کی شب جاگنے والو

اور یاد مجھے کوئی کہانی بھی نہیں ہے

زیست کی یکسانیت سے تنگ آ جاتے ہیں سب

ایک دن تو بھی مری باتوں سے اکتا جائے گا

جو تم کہتے ہو مجھ سے پہلے تم آئے تھے محفل میں

تو پھر تم ہی بتاؤ آج کیا کیا ہونے والا ہے

سیاہ رات کے پہلو میں جسم کے اندر

کسی گناہ کی خواہش کو پالتے رہنا

شریک وہ بھی رہا کاوش محبت میں

شروع اس نے کیا تھا تمام میں نے کیا

وہ چہرہ مجھے صاف دکھائی نہیں دیتا

رہ جاتی ہیں سایوں میں الجھ کر مری آنکھیں

اب جسم کے اندر سے آواز نہیں آتی

اب جسم کے اندر وہ رہتا ہی نہیں ہوگا

بات تو یہ ہے کہ وہ گھر سے نکلتا بھی نہیں

اور مجھ کو سر بازار لئے پھرتا ہے

یہ کائنات بھی کیا قید خانہ ہے کوئی

یہ زندگی بھی کوئی طرز انتقام ہے کیا

خواب میلے ہو گئے تھے ان کو دھونا چاہئے تھا

رات کی تنہائیوں میں خوب رونا چاہئے تھا

ابتدا اس نے ہی کی تھی مری رسوائی کی

وہ خدا ہے تو گنہ گار نہیں ہوں میں بھی

عجیب فرصت آوارگی ملی ہے مجھے

بچھڑ کے تجھ سے زمانے کا ڈر نہیں ہے کوئی

کسی نے جاں ہی لٹا دی وفاؤں کی خاطر

تم ہی بتاؤ کہ قصہ یہ کس کتاب کا ہے

میں جس کو سوچتا رہتا ہوں کیا ہے وہ آخر

مرے لبوں پہ جو رہتا ہے اس کا نام ہے کیا

آئنے میں کہیں گم ہو گئی صورت میری

مجھ سے ملتی ہی نہیں شکل و شباہت میری

بادہ و جام کے رہے ہی نہیں

ہم کسی کام کے رہے ہی نہیں

تری دعائیں بھی شامل ہیں کوششوں میں مری

مصیبتوں کا نہ ٹلنا عجیب لگتا ہے

ستم کئے ہیں تو کیا تجھ سے ہے حیات مری

قریب آ مری آنکھوں کے خواب، زندہ ہوں

سنتے ہیں بیاباں بھی کبھی شہر رہا تھا

سو شہر بھی اک روز بیابان رہے گا

میں اپنے آپ سے آگے نکل گیا ہوں بہت

کسی سفر کے حوالے یہ جسم و جاں کر کے

ہوش جاتا رہا دنیا کی خبر ہی نہ رہی

جب کہ ہم بھول گئے خود کو وہ تب یاد آیا

ایک دن اس کی نگاہوں سے بھی گر جائیں گے

اس کے بخشے ہوئے لمحوں پہ بسر کرتے ہوئے

اک تو نے ہی نہیں کی جنوں کی دکان بند

سودا کوئی ہمارے بھی سر میں نہیں رہا

تمام عمر بقید سفر رہا ہوں میں

طواف پھر کسی کعبہ کا کر رہا ہوں میں

وہ بھی نہ آیا عمر گزشتہ کے مثل ہی

ہم بھی کھڑے رہے در و دیوار کی طرح

وہ مضطرب تھا بہت مجھ کو درمیاں کر کے

سو پا لیا ہے اسے خود کو رائیگاں کر کے

ہمارے کاندھے پہ اس بار صرف آنکھیں ہیں

ہمارے کاندھے پہ اس بار سر نہیں ہے کوئی

پانیوں میں کھیل کچھ ایسا بھی ہونا چاہئے تھا

بیچ دریا میں کوئی کشتی ڈبونا چاہئے تھا

اپنے ہی سائے سے ہر گام لرز جاتا ہوں

مجھ سے طے ہی نہیں ہوتی ہے مسافت میری

مرے مرنے کا غم تو بے سبب ہوگا کہ اب کے بار

مرے اندر تو کوئی اور پیدا ہونے والا ہے

تو دیکھیں اور کسی کو جو وہ نہیں موجود

تو جائیں اور کہیں اس نے جب پکارا نہیں

میں تو اب شہر میں ہوں اور کوئی رات گئے

چیختا رہتا ہے صحرائے بدن کے اندر