Sudarshan Fakir's Photo'

سدرشن فاکر

1934 - 2008 | جالندھر, ہندوستان

سدرشن کامرا ، کئی فلموں کے لئے گیت لکھے

سدرشن کامرا ، کئی فلموں کے لئے گیت لکھے

سدرشن فاکر

غزل 16

اشعار 20

سامنے ہے جو اسے لوگ برا کہتے ہیں

جس کو دیکھا ہی نہیں اس کو خدا کہتے ہیں

تیرے جانے میں اور آنے میں

ہم نے صدیوں کا فاصلہ دیکھا

عشق ہے عشق یہ مذاق نہیں

چند لمحوں میں فیصلہ نہ کرو

ہم تو سمجھے تھے کہ برسات میں برسے گی شراب

آئی برسات تو برسات نے دل توڑ دیا

دیکھنے والو تبسم کو کرم مت سمجھو

انہیں تو دیکھنے والوں پہ ہنسی آتی ہے

گیت 1

 

تصویری شاعری 6

یہ دولت بھی لے لو یہ شہرت بھی لے لو بھلے چھین لو مجھ سے سے میری جوانی مگر مجھ کو لوٹا دو وہ بچپن کا ساون وہ کاغذ کی کشتی وہ بارش کا پانی یہ دولت بھی لے لو یہ شہرت بھی لے لو بھلے چھین لو مجھ سے میری جوانی مگر مجھ کو لوٹا دو بچپن کا ساون وہ کاغذ کی کشتی وہ بارش کا پانی محلے کی سب سے نشانی پرانی وہ بڑھیا جسے بچے کہتے تھے نانی وہ نانی کی باتوں میں پریوں کا ڈھیرا وہ چہرے کی جھریوں میں صدیوں کا پھیرا بھلائے نہیں بھول سکتا ہے کوئی وہ چھوٹی سی راتیں وہ لمبی کہانی وہ کاغذ کی کشتی وہ بارش کا پانی کھڑی دھوپ میں اپنے گھر سے نکلنا وہ چڑیاں وہ بلبل وہ تتلی پکڑنا وہ گڑیوں کی شادی پہ لڑنا جھگڑنا وہ جھولوں سے گرنا وہ گرتے سنبھلنا وہ پیتل کے چھاؤں کے پیارے سے تحفے وہ ٹوٹی ہوئی چوڑیوں کی نشانی وہ کاغذ کی کشتی وہ بارش کا پانی کبھی ریت کے اونچے ٹیلوں پہ جانا گھروندے بنانا بنا کے مٹانا وہ معصوم چاہت کی تصویر اپنی وہ خوابوں کھلونوں کی جاگیر اپنی نہ دنیا کا غم تھا نہ رشتوں کے بندھن بڑی خوب_صورت تھی وہ زندگانی یہ دولت بھی لے لو یہ شہرت بھی لے لو بھلے چھین لو مجھ سے میری جوانی مگر مجھ کو لوٹا دو بچپن کا ساون وہ کاغذ کی کشتی وہ بارش کا پانی وہ کاغذ کی کشتی وہ بارش کا پانی

اگر ہم کہیں اور وہ مسکرا دیں ہم ان کے لیے زندگانی لٹا دیں ہر اک موڑ پر ہم غموں کو سزا دیں چلو زندگی کو محبت بنا دیں اگر خود کو بھولے تو کچھ بھی نہ بھولے کہ چاہت میں ان کی خدا کو بھلا دیں کبھی غم کی آندھی جنہیں چھو نہ پائے وفاؤں کے ہم وہ نشیمن بنا دیں قیامت کے دیوانے کہتے ہیں ہم سے چلو ان کے چہرے سے پردہ ہٹا دیں سزا دیں صلہ دیں بنا دیں مٹا دیں مگر وہ کوئی فیصلہ تو سنا دیں

مری زباں سے مری داستاں سنو تو سہی یقیں کرو نہ کرو مہرباں سنو تو سہی چلو یہ مان لیا مجرم_محبت ہیں ہمارے جرم کا ہم سے بیاں سنو تو سہی بنوگے دوست مرے تم بھی دشمنو اک دن مری حیات کی آہ_و_فغاں سنو تو سہی لبوں کو سی کے جو بیٹھے ہیں بزم_دنیا میں کبھی تو ان کی بھی خاموشیاں سنو تو سہی

 

ویڈیو 13

This video is playing from YouTube

ویڈیو کا زمرہ
دیگر
Ab mohabbat na wafa aur na yaaraane hai

جگجیت سنگھ

Hum to yun apni zindagi se mile

شوبھا گرٹو

Wo kaghaz ki kashti wo barish ka pani

جگجیت سنگھ

Zindagi kuchh bhi nahi phir bhi

بھارتی وشواناتھن

اگر ہم کہیں اور وہ مسکرا دیں

جگجیت سنگھ

اگر ہم کہیں اور وہ مسکرا دیں

سدرشن فاکر

اہل_الفت کے حوالوں پہ ہنسی آتی ہے

بیگم اختر

دل کے دیوار_و_در پہ کیا دیکھا

چترا سنگھ

دل کے دیوار_و_در پہ کیا دیکھا

سدرشن فاکر

عشق میں غیرت_جذبات نے رونے نہ دیا

سجاد علی

عشق میں غیرت_جذبات نے رونے نہ دیا

بیگم اختر

عشق میں غیرت_جذبات نے رونے نہ دیا

سدرشن فاکر

عشق میں غیرت_جذبات نے رونے نہ دیا

نامعلوم

فلسفے عشق میں پیش آئے سوالوں کی طرح

مہندرجیت سنگھ

مری زباں سے مری داستاں سنو تو سہی

Sudha Malhotra

کچھ تو دنیا کی عنایات نے دل توڑ دیا

بیگم اختر

کچھ تو دنیا کی عنایات نے دل توڑ دیا

سدرشن فاکر

مزید دیکھیے

متعلقہ شعرا

  • شہریار شہریار ہم عصر
  • ظفر اقبال ظفر اقبال ہم عصر
  • کفیل آزر امروہوی کفیل آزر امروہوی ہم عصر
  • گلزار گلزار ہم عصر
  • ندا فاضلی ندا فاضلی ہم عصر
  • قتیل شفائی قتیل شفائی ہم عصر

"جالندھر" کے مزید شعرا

  • خوشبیر سنگھ شادؔ خوشبیر سنگھ شادؔ
  • عرش ملسیانی عرش ملسیانی
  • ساحر سیالکوٹی ساحر سیالکوٹی
  • سلیم انصاری سلیم انصاری
  • مخمور جالندھری مخمور جالندھری
  • کنول ایم۔اے کنول ایم۔اے
  • صوفیہ دیپیکا کوثر صوفیہ دیپیکا کوثر
  • رینو نیر رینو نیر
  • نسیم نور محلی نسیم نور محلی
  • قیس جالندھری قیس جالندھری