Syed Zamin Abbas Kazmi's Photo'

سید ضامن عباس کاظمی

1989 | ساہیوال, پاکستان

83
Favorite

باعتبار

پہلے بھی جس پہ مرے صبر کی حد ختم ہوئی

تو نے کر دی نا وہی بات دوبارہ مرے دوست

ہجر ہوگا نہ کوئی ہجر کا نوحہ ہوگا

باز آتے ہیں محبت سے جو ہوگا ہوگا

جیسے میں دوستوں سے ہنس کے گلے ملتا ہوں

کوئی معمولی اداکار نہیں کر سکتا

ایک دو بار تو روکوں گا مروت میں تجھے

سیکڑوں بار تو اصرار نہیں کر سکتا

میں جو کہتا ہوں مجھ سے دور رہو

یہ نصیحت ہے التماس نہیں

ہماری بات کاٹی جا رہی ہے

کسی کا حوصلہ بڑھتا رہا ہے

قوت فکر بھی دی ایسے کہ اک حد میں رہو

یعنی بے کار سمجھ دار بنائے گئے ہم

تمہاری بات سے اتنا بھی دکھ نہیں پہنچا

مگر جو پہنچا تمہاری وضاحتوں سے مجھے

باغ میں ایک بھی پھول ایک بھی پھل کے ہوتے

تو مجھے زیست سے بیزار نہیں کر سکتا

سوال وصل پہ اک بار اور غور کریں

بجا کہ سوچ لیا ہے درست ہے پھر بھی

وہ کہہ رہا تھا برائی برائی جنتی ہے

سو اس کے واسطے لے کر کنول گیا ہوں میں