خوش بیانی پر شاعری

لہجہ کہ جیسے صبح کی خوشبو اذان دے

جی چاہتا ہے میں تری آواز چوم لوں

بشیر بدر

خدا کی اس کے گلے میں عجیب قدرت ہے

وہ بولتا ہے تو اک روشنی سی ہوتی ہے

بشیر بدر

بولتے رہنا کیونکہ تمہاری باتوں سے

لفظوں کا یہ بہتا دریا اچھا لگتا ہے

نامعلوم

عجب لہجہ ہے اس کی گفتگو کا

غزل جیسی زباں وہ بولتا ہے

نامعلوم

وہ خوش کلام ہے ایسا کہ اس کے پاس ہمیں

طویل رہنا بھی لگتا ہے مختصر رہنا

وزیر آغا

اس غیرت ناہید کی ہر تان ہے دیپک

شعلہ سا لپک جائے ہے آواز تو دیکھو

مومن خاں مومن

پھول کی خوشبو ہوا کی چاپ شیشہ کی کھنک

کون سی شے ہے جو تیری خوش بیانی میں نہیں

نامعلوم

لے میں ڈوبی ہوئی مستی بھری آواز کے ساتھ

چھیڑ دے کوئی غزل اک نئے انداز کے ساتھ

نامعلوم

چراغ جلتے ہیں باد صبا مہکتی ہے

تمہارے حسن تکلم سے کیا نہیں ہوتا

حامد محبوب

میری یہ آرزو ہے وقت مرگ

اس کی آواز کان میں آوے

غمگین دہلوی

اس کی آواز میں تھے سارے خد و خال اس کے

وہ چہکتا تھا تو ہنستے تھے پر و بال اس کے

وزیر آغا

متعلقہ موضوعات