Zulfiqar Aadil's Photo'

ذوالفقار عادل

1972 | کراچی, پاکستان

نئی نسل کے نمائندہ شاعر اور افسانہ نگار۔

نئی نسل کے نمائندہ شاعر اور افسانہ نگار۔

یہ کس نے ہات پیشانی پہ رکھا

ہماری نیند پوری ہو گئی ہے

واپس پلٹ رہے ہیں ازل کی تلاش میں

منسوخ آپ اپنا لکھا کر رہے ہیں ہم

یوں اٹھے اک دن کہ لوگوں کو ہوا

ابر کا دھوکا ہماری خاک پر

دشت و دریا کی ابتدا سے ہیں

ہم وہی تین دن کے پیاسے ہیں

روانی میں نظر آتا ہے جو بھی

اسے تسلیم کر لیتے ہیں پانی

بیٹھے بیٹھے اسی غبار کے ساتھ

اب تو اڑنا بھی آ گیا ہے مجھے

عادلؔ سجے ہوئے ہیں سبھی خواب خوان پر

اور انتظار خلق خدا کر رہے ہیں ہم