ابھی سے کیسے کہوں تم کو بے وفا صاحب

اندرا ورما

ابھی سے کیسے کہوں تم کو بے وفا صاحب

اندرا ورما

MORE BYاندرا ورما

    ابھی سے کیسے کہوں تم کو بے وفا صاحب

    ابھی تو اپنے سفر کی ہے ابتدا صاحب

    How can I call you unfaithful already

    When this is only the beginning of our journey, sahab

    نہ جانے کتنے لقب دے رہا ہے دل تم کو

    حضور جان وفا اور ہم نوا صاحب

    My heart is bestowing so many titles upon you,

    Lord, Life of my Faith, the One who Speaks with Me, sahab

    تمہاری یاد میں تارے شمار کرتی ہوں

    نہ جانے ختم کہاں ہو یہ سلسلہ صاحب

    I count the stars in your memory

    Who knows where this series will end, sahab

    کتاب زیست کا عنوان بن گئے ہو تم

    ہمارے پیار کی دیکھو یہ انتہا صاحب

    You have become the title of the book of life

    Such is the extent of my love, sahab

    تمہارا چہرہ مرے عکس سے ابھرتا ہے

    نہ جانے کون بدلتا ہے آئینہ صاحب

    Your face rises out my reflection

    Who knows who changes the mirror, saheb

    رہ وفا میں ذرا احتیاط لازم ہے

    ہر ایک گام پہ ہوتا ہے حادثہ صاحب

    A little caution is necessary on the path of loyalty

    At every steps an accident takes place, sahab

    سیاہ رات ہے مہتاب بن کے آ جاؤ

    یہ اندراؔ کے لبوں پر ہے التجا صاحب

    Come, like the moon on a dark night

    This is the entreaty on Indira's lips, sahab

    RECITATIONS

    ریکھا بھاردواج

    ریکھا بھاردواج

    ریکھا بھاردواج

    ابھی سے کیسے کہوں تم کو بے وفا صاحب ریکھا بھاردواج

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY