Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

التجائے مسافر

علامہ اقبال

التجائے مسافر

علامہ اقبال

MORE BYعلامہ اقبال

    دلچسپ معلومات

    بہ_درگاہ_حضرت محبوب_الٰہی دہلی حصہ اول : 1905 تک ( بانگ درا)

    فرشتے پڑھتے ہیں جس کو وہ نام ہے تیرا

    بڑی جناب تری فیض عام ہے تیرا

    ستارے عشق کے تیری کشش سے ہیں قائم

    نظام مہر کی صورت نظام ہے تیرا

    تری لحد کی زیارت ہے زندگی دل کی

    مسیح و خضر سے اونچا مقام ہے تیرا

    نہاں ہے تیری محبت میں رنگ محبوبی

    بڑی ہے شان بڑا احترام ہے تیرا

    اگر سیاہ دلم داغ لالہ زار توام

    دگر کشادہ جبینم گل بہار توام

    چمن کو چھوڑ کے نکلا ہوں مثل نکہت گل

    ہوا ہے صبر کا منظور امتحاں مجھ کو

    چلی ہے لے کے وطن کے نگار خانے سے

    شراب علم کی لذت کشاں کشاں مجھ کو

    نظر ہے ابر کرم پر درخت صحرا ہوں

    کیا خدا نے نہ محتاج باغباں مجھ کو

    فلک نشیں صفت مہر ہوں زمانے میں

    تری دعا سے عطا ہو وہ نردباں مجھ کو

    مقام ہم سفروں سے ہو اس قدر آگے

    کہ سمجھے منزل مقصود کارواں مجھ کو

    مری زبان قلم سے کسی کا دل نہ دکھے

    کسی سے شکوہ نہ ہو زیر آسماں مجھ کو

    دلوں کو چاک کرے مثل شانہ جس کا اثر

    تری جناب سے ایسی ملے فغاں مجھ کو

    بنایا تھا جسے چن چن کے خار و خس میں نے

    چمن میں پھر نظر آئے وہ آشیاں مجھ کو

    پھر آ رکھوں قدم مادر و پدر پہ جبیں

    کیا جنہوں نے محبت کا راز داں مجھ کو

    وہ شمع بارگہہ خاندان مرتضوی

    رہے گا مثل حرم جس کا آستاں مجھ کو

    نفس سے جس کے کھلی میری آرزو کی کلی

    بنایا جس کی مروت نے نکتہ داں مجھ کو

    دعا یہ کر کہ خداوند آسمان و زمیں

    کرے پھر اس کی زیارت سے شادماں مجھ کو

    وہ میرا یوسف ثانی وہ شمع محفل عشق

    ہوئی ہے جس کی اخوت قرار جاں مجھ کو

    جلا کے جس کی محبت نے دفتر من و تو

    ہوائے عیش میں پالا کیا جواں مجھ کو

    ریاض دہر میں مانند گل رہے خنداں

    کہ ہے عزیز تر از جاں وہ جان جاں مجھ کو

    شگفتہ ہو کے کلی دل کی پھول ہو جائے

    یہ التجائے مسافر قبول ہو جائے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    التجائے مسافر نعمان شوق

    موضوعات

    یہ متن درج ذیل زمرے میں بھی شامل ہے

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے