Sanaullah Zaheer's Photo'

ثناء اللہ ظہیر

1964 | فیصل آباد, پاکستان

ثناء اللہ ظہیر

غزل 4

 

اشعار 7

اس کے کمرے سے اٹھا لایا ہوں یادیں اپنی

خود پڑا رہ گیا لیکن کسی الماری میں

  • شیئر کیجیے

میں دے رہا ہوں تجھے خود سے اختلاف کا حق

یہ اختلاف کا حق ہے مخالفت کا نہیں

  • شیئر کیجیے

میرا یہ دکھ کہ میں سکہ ہوں گئے وقتوں کا

تیرا ہو کر بھی ترے کام نہیں آ سکتا

  • شیئر کیجیے

خلا میں تیرتے پھرتے ہیں ہاتھ پکڑے ہوئے

زمیں کی ایک صدی ایک سال سورج کا

  • شیئر کیجیے

کہانی پھیل رہی ہے اسی کے چاروں طرف

نکالنا تھا جسے داستاں کے اندر سے

  • شیئر کیجیے

کتاب 1

 

"فیصل آباد" کے مزید شعرا

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

GET YOUR FREE PASS
بولیے