Saqi Faruqi's Photo'

ساقی فاروقی

1936 - 2018 | لندن, برطانیہ

ممتاز اوررجحان ساز جدید شاعر ۔ لندن مقیم تھے

ممتاز اوررجحان ساز جدید شاعر ۔ لندن مقیم تھے

غزل

آگ ہو دل میں تو آنکھوں میں دھنک پیدا ہو

نعمان شوق

ابھی نظر میں ٹھہر دھیان سے اتر کے نہ جا

نعمان شوق

ابھی نظر میں ٹھہر دھیان سے اتر کے نہ جا

نعمان شوق

اک رات ہم ایسے ملیں جب دھیان میں سائے نہ ہوں

نعمان شوق

ایک دن ذہن میں آسیب پھرے_گا ایسا

نعمان شوق

ایک دن ذہن میں آسیب پھرے_گا ایسا

نعمان شوق

باہر کے اسرار لہو کے اندر کھلتے ہیں

نعمان شوق

بدن چراتے ہوئے روح میں سمایا کر

نعمان شوق

جو تیرے دل میں ہے وہ بات میرے دھیان میں ہے

نعمان شوق

جو تیرے دل میں ہے وہ بات میرے دھیان میں ہے

نعمان شوق

حملہ_آور کوئی عقب سے ہے

نعمان شوق

خامشی چھیڑ رہی ہے کوئی نوحہ اپنا

نعمان شوق

خاک نیند آئے اگر دیدۂ_بیدار ملے

نعمان شوق

خاک نیند آئے اگر دیدۂ_بیدار ملے

نعمان شوق

خواب کو دن کی شکستوں کا مداوا نہ سمجھ

نعمان شوق

دامن میں آنسوؤں کا ذخیرہ نہ کر ابھی

نعمان شوق

دامن میں آنسوؤں کا ذخیرہ نہ کر ابھی

نعمان شوق

درد کے عتاب لے دوست اسے شمار کر

نعمان شوق

درد کے عتاب لے دوست اسے شمار کر

نعمان شوق

رات اپنے خواب کی قیمت کا اندازہ ہوا

نعمان شوق

رات نادیدہ بلاؤں کے اثر میں ہم تھے

نعمان شوق

ریت کی صورت جاں پیاسی تھی آنکھ ہماری نم نہ ہوئی

نعمان شوق

زمانوں کے خرابوں میں اتر کر دیکھ لیتا ہوں

نعمان شوق

زندہ رہنے کے تذکرے ہیں بہت

نعمان شوق

سب کچھ نہ کہیں سوگ منانے میں چلا جائے

نعمان شوق

سفر کی دھوپ میں چہرے سنہرے کر لیے ہم نے

نعمان شوق

سوچ میں ڈوبا ہوا ہوں عکس اپنا دیکھ کر

نعمان شوق

شہر کا شہر ہوا جان کا پیاسا کیسا

نعمان شوق

لوگ تھے جن کی آنکھوں میں اندیشہ کوئی نہ تھا

نعمان شوق

مجھ کو مری شکست کی دوہری سزا ملی

نعمان شوق

مرا اکیلا خدا یاد آ رہا ہے مجھے

نعمان شوق

مٹی تھی خفا موج اٹھا لے گئی ہم کو

نعمان شوق

میں ایک رات محبت کے سائبان میں تھا

نعمان شوق

میں تیرے ظلم دکھاتا ہوں اپنا ماتم کرنے کے لیے

نعمان شوق

میں وہ ہوں جس پہ ابر کا سایہ پڑا نہیں

نعمان شوق

میں وہی دشت ہمیشہ کا ترسنے والا

نعمان شوق

میں کسی جواز کے حصار میں نہ تھا

نعمان شوق

میں کھل نہیں سکا کہ مجھے نم نہیں ملا

نعمان شوق

وحشت دیواروں میں چنوا رکھی ہے

نعمان شوق

وقت ابھی پیدا نہ ہوا تھا تم بھی راز میں تھے

نعمان شوق

وہ آگ ہوں کہ نہیں چین ایک آن مجھے

نعمان شوق

وہ دکھ جو سوئے ہوئے ہیں انہیں جگا دوں_گا

نعمان شوق

وہ سخی ہے تو کسی روز بلا کر لے جائے

نعمان شوق

وہ لوگ جو زندہ ہیں وہ مر جائیں_گے اک دن

نعمان شوق

وہی آنکھوں میں اور آنکھوں سے پوشیدہ بھی رہتا ہے

نعمان شوق

یوں مرے پاس سے ہو کر نہ گزر جانا تھا

نعمان شوق

یہ کون آیا شبستاں کے خواب پہنے ہوئے

نعمان شوق

یہیں کہیں پہ کبھی شعلہ_کار میں بھی تھا

نعمان شوق

نظم

ایک سور سے

نعمان شوق

ایک کتا نظم

نعمان شوق

پام کے پیڑ سے گفتگو

نعمان شوق

پوسٹر

نعمان شوق

ترغیب

نعمان شوق

حمل_سرا

نعمان شوق

خالی بورے میں زخمی بلا

نعمان شوق

خرگوش کی سرگزشت

نعمان شوق

دیوار

نعمان شوق

زندہ پانی سچا

نعمان شوق

سائے کا سفر

نعمان شوق

سرخ گلاب اور بدر_منیر

نعمان شوق

مرتا لمحہ

نعمان شوق

مردہ_خانہ

نعمان شوق

مستانہ ہیجڑا

نعمان شوق

موت کی خوشبو

نعمان شوق

میں اور میں!

نعمان شوق

ڈسٹ_بن

نعمان شوق

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI