Tabish Dehlvi's Photo'

تابش دہلوی

1911 - 2004 | کراچی, پاکستان

تخلص : 'تابش ؔ'

اصلی نام : مسعود الحسن

پیدائش : 11 Nov 1911 | دلی, ہندوستان

وفات : 23 Sep 2004

Relatives : فانی بدایونی (استاد)

آئینہ جب بھی رو بہ رو آیا

اپنا چہرہ چھپا لیا ہم نے

نام مسعود الحسن اور تابش تخلص تھا۔ان کا پہلا تخلص مسعود تھا۔ ۱۱؍نومبر ۱۹۱۱ء کو دہلی میں پیدا ہوئے۔ ابتدائی تعلیم گھر پر ہوئی۔ بعد ازاں اپنے نانا کے پاس حیدرآباد، دکن چلے گئے۔ پہلی ملازمت پوسٹ اینڈ ٹیلیگراف، حیدرآباد ،دکن میں کی۔ بعد میں پطرس بخاری کے توسط سے ۱۹۴۱ء میں آل انڈیا ریڈیو سے منسلک ہوگئے۔ تقسیم ہند کے بعد پاکستان آگئے اور ریڈیو پاکستان ، کراچی کے نیوزسکشن سے منسلک ہوگئے۔انھوں نے ۱۹۵۸ء میں کراچی یونیورسٹی سے بی اے کیا۔ تابش دہلوی نے ۱۹۴۱ء سے ۱۹۶۳ء تک ۲۳سال مسلسل اردو کی خبریں پڑھیں۔ ۱۹۲۳ء سے شاعری کی ابتدا ہوئی۔ فانی بدایونی سے اصلاح لی۔ غزل، نظم ،نعت، قصیدہ اور مرثیہ میں طبع آزمائی کی۔ تابش دہلوی کراچی میں سکونت پذیر رہے۔ انھیں متعدد اعزازات سے نوازا گیا۔ ۱۹۸۸ء میں حکومت پاکستان کا صدارتی ایوارڈ’’تمغۂ امتیاز‘‘عطا ہوا۔ان کی تصانیف کے نام یہ ہیں: ’’نیم روز‘‘، ’’چراغ صحرا‘‘ ، ’’غبار انجم‘‘،’’تقدیس ‘‘، ’’ماہ شکستہ‘‘، دیدباز دید‘‘(خود نوشت)، ’’دھوپ چھاؤں‘‘۔ ۲۳؍ ستمبر ۲۰۰۴ء کو ۹۳ سال کی عمر میں کراچی میں اپنے خالق حقیقی سے جاملے۔ بحوالۂ:پیمانۂ غزل(جلد دوم)،محمد شمس الحق،صفحہ:26