Tarkash Pradeep's Photo'

ترکش پردیپ

1984 | دلی, ہندوستان

تصویری شاعری 1

کئی اندھیروں کے ملنے سے رات بنتی ہے اور اس کے بعد چراغوں کی بات بنتی ہے کرے جو کوئی تو مسمار ہی نہیں ہوتی نہ جانے کون سے مٹی کی ذات بنتی ہے بناتا ہوں میں تصور میں اس کا چہرہ مگر ہر ایک بار نئی کائنات بنتی ہے اکیلے مجھ کو بنا ہی نہیں سکا کوئی بنانے بیٹھو تو تنہائی ساتھ بنتی ہے

 

متعلقہ شعرا

  • پلو مشرا پلو مشرا ہم عصر
  • وکاس شرما راز وکاس شرما راز ہم عصر
  • وپل کمار وپل کمار ہم عصر

"دلی" کے مزید شعرا

  • اظہر غوری اظہر غوری
  • اشہر ہاشمی اشہر ہاشمی
  • شیث محمد اسماعیل اعظمی شیث محمد اسماعیل اعظمی
  • ظفر انور ظفر انور
  • مغل فاروق پرواز مغل فاروق پرواز
  • سرفراز خالد سرفراز خالد
  • عازم کوہلی عازم کوہلی
  • محمد علی تشنہ محمد علی تشنہ
  • آلوک مشرا آلوک مشرا
  • سالم سلیم سالم سلیم