ADVERTISEMENT

ریختہ پر اشعار

’ریختہ‘ اردو زبان کے

پرانے ناموں میں سے ایک نام ہے ۔ ریختہ کے لغوی معنی ملی جلی چیز کے ہوتے ہیں ۔ اردو زبان چونکہ مختلف بولیوں اور زبانوں سے مل کر بنی تھی اس لئے ایک زمانے میں اس زبان کو ریختہ کہا گیا ۔ یہاں آپ ایسے اشعار پڑھیں گے جن میں اردو کو اس کے اسی پرانے نام سے پکارا گیا ہے ۔

ریختے کے تمہیں استاد نہیں ہو غالبؔ

کہتے ہیں اگلے زمانے میں کوئی میرؔ بھی تھا

مرزا غالب

گفتگو ریختے میں ہم سے نہ کر

یہ ہماری زبان ہے پیارے

میر تقی میر

اب نہ غالبؔ سے شکایت ہے نہ شکوہ میرؔ کا

بن گیا میں بھی نشانہ ریختہ کے تیر کا

محمد علوی

پڑھتے پھریں گے گلیوں میں ان ریختوں کو لوگ

مدت رہیں گی یاد یہ باتیں ہماریاں

میر تقی میر
ADVERTISEMENT

جو یہ کہے کہ ریختہ کیونکے ہو رشک فارسی

گفتۂ غالبؔ ایک بار پڑھ کے اسے سنا کہ یوں

مرزا غالب

یار کے آگے پڑھا یہ ریختہ جا کر نظیرؔ

سن کے بولا واہ واہ اچھا کہا اچھا کہا

نظیر اکبرآبادی

جا پڑے چپ ہو کے جب شہر خموشاں میں نظیرؔ

یہ غزل یہ ریختہ یہ شعر خوانی پھر کہاں

نظیر اکبرآبادی

ریختہ گوئی کی بنیاد ولیؔ نے ڈالی

بعد ازاں خلق کو مرزاؔ سے ہے اور میرؔ سے فیض

مصحفی غلام ہمدانی
ADVERTISEMENT

قائمؔ جو کہیں ہیں فارسی یار

اس سے تو یہ ریختہ ہے بہتر

قائم چاندپوری

کیا ریختہ کم ہے مصحفیؔ کا

بو آتی ہے اس میں فارسی کی

مصحفی غلام ہمدانی

یہ نظم آئیں یہ طرز بندش سخنوری ہے فسوں گری ہے

کہ ریختہ میں بھی تیرے شبلیؔ مزہ ہے طرز علی حزیںؔ کا

شبلی نعمانی

آنکھیں نہ چرا مصحفیٔؔ ریختہ گو سے

اک عمر سے تیرا ہے ثنا خوان ادھر دیکھ

مصحفی غلام ہمدانی
ADVERTISEMENT

موئے نے منہ کی کھائی پھر بھی یہ زور زوری

یہ ریختی ہے بھائی تم ریختہ تو جانو

شمیم قاسمی

قائم میں غزل طور کیا ریختہ ورنہ

اک بات لچر سی بزبان دکنی تھی

قائم چاندپوری

اے مصحفیؔ استاد فن ریختہ گوئی

تجھ سا کوئی عالم کو میں چھانا نہیں ملتا

مصحفی غلام ہمدانی

ریختہ کے قصر کی بنیاد اٹھائی اے نصیرؔ

کام ہے ملک سخن میں صاحب مقدور کا

شاہ نصیر
ADVERTISEMENT

قائمؔ میں ریختہ کو دیا خلعت قبول

ورنہ یہ پیش اہل ہنر کیا کمال تھا

قائم چاندپوری

جب سے معنی بندی کا چرچا ہوا اے مصحفیؔ

خلطے میں جاتا رہا حسن زبان ریختہ

مصحفی غلام ہمدانی

کیوں نہ آ کر اس کے سننے کو کریں سب یار بھیڑ

آبروؔ یہ ریختہ تو نیں کہا ہے دھوم کا

آبرو شاہ مبارک

مصحفیؔ گرچہ یہ سب کہتے ہیں ہم سے بہتر

اپنی پر ریختہ گوئی کی زباں اور ہی ہے

مصحفی غلام ہمدانی
ADVERTISEMENT

پیچ دے دے لفظ و معنی کو بناتے ہیں کلفت

اور وہ پھر اس پہ رکھتے ہیں گمان ریختہ

مصحفی غلام ہمدانی

طبع کہہ اور غزل، ہے یہ نظیریؔ کا جواب

ریختہ یہ جو پڑھا قابل اظہار نہ تھا

جرأت قلندر بخش