جرأت قلندر بخش کے 10 منتخب شعر

اپنی شاعری میں محبوب کے ساتھ معاملہ بندی کےمضمون کے لیے مشہور،نوجوانی میں بینائی سے محروم ہوگئے

الٰہی کیا علاقہ ہے وہ جب لیتا ہے انگڑائی

مرے سینے میں سب زخموں کے ٹانکے ٹوٹ جاتے ہیں

جرأت قلندر بخش

مل گئے تھے ایک بار اس کے جو میرے لب سے لب

عمر بھر ہونٹوں پہ اپنے میں زباں پھیرا کیے

جرأت قلندر بخش

دل وحشی کو خواہش ہے تمہارے در پہ آنے کی

دوانا ہے ولیکن بات کرتا ہے ٹھکانے کی

جرأت قلندر بخش

اس زلف پہ پھبتی شب دیجور کی سوجھی

اندھے کو اندھیرے میں بڑی دور کی سوجھی

جرأت قلندر بخش

غم مجھے ناتوان رکھتا ہے

عشق بھی اک نشان رکھتا ہے

جرأت قلندر بخش

اس شخص نے کل ہاتوں ہی ہاتوں میں فلک پر

سو بار چڑھایا مجھے سو بار اتارا

جرأت قلندر بخش

کیا کیا کیا ہے کوچہ بہ کوچہ مجھے خراب

خانہ خراب ہو دل خانہ خراب کا

جرأت قلندر بخش

خوبان جہاں کی ہے ترے حسن سے خوبی

تو خوب نہ ہوتا تو کوئی خوب نہ ہوتا

جرأت قلندر بخش

کھائے سو پچھتائے اور پچھتائے وہ بھی جو نہ کھائے

یہ غم عشق بتاں لڈو ہے گویا بور کا

جرأت قلندر بخش

کہیے کیوں کر نہ اسے بادشہ کشور حسن

کہ جہاں جا کے وہ بیٹھا وہیں دربار لگا

جرأت قلندر بخش